” تابوت میں وطن روانگی“

تحریر: سیّد اقبال حیدر

جرمنی میں پاکستان پیپلز پارٹی کے سرپرستِ اعلیٰ ہردلعزیز شخصیت،ممتاز بزنس مین محب وطن سیّد ظفر عباس شاہ جرمنی میں 42 سال کا طویل عرصہ گزار کے قطرایرویز کی فلائٹ سے اپنے تابوت سمیت وطنِ عزیز پہنچ گئے،یہ پاکستان سے محبت کی معراج ہے جب 73 سالہ پاکستانی اپنے مرنے سے پہلے یہ وصیت کر جاتا ہے کہ میرے جسد خاکی کو میرے وطن پاکستان ضرور بھجوا دینا،یہی وصیت محبِّ وطن سیّد ظفر عباس کی بھی کی تھی،اور اس کے احترام میں ان کے عزیز محسن نقوی، دوست شاہد حسن اور بیٹے محمد الیاس نے عالمی وبا ”کرونا“ کی وجہ سے ہونے والی بے پناہ دشواریوں کے باوجوددن رات ایک کر کے ان کے وطن کے آخری سفر کو یقینی بنا ڈالا۔ آپ پاکستان میں پیپلز پارٹی کے مضبوط نظریاتی،فعال کارکن تھے جنرل ضیاء الحق کے PPP پر مظالم اور کوڑوں کی بوچھاڑ سے بچنے کے لئے جہاں بہت سے کارکنوں نے ہجرت کی انھیں میں آپ نے بھی1978 میں جرمنی ہجرت کا فیصلہ کیا اور جرمنی آ کر سیاسی پناہ حاصل کی اور جرمنی میں پاکستان پیپلز پارٹی کو فعال کرنے میں کردار ادا کیا آپ کا ابتدائی قیام جرمنی کے پہلے دارلحکومت ”بون“ اور زندگی کے آخری سال ”ماگڈے برگ“ میں گذرے۔سیّد ظفر عباس جرمنی میں پاکستان پیپلز پارٹی جرمنی کے لگ بھگ20سال صدر رہے اور وقتِ آخر تک سرپرستِ اعلیٰ رہے۔اس دوران آپ کو محترمہ بے نظیر بھٹو صاحبہ،ان کی والدہ نصرت بھٹو صاحبہ،منظور علی وٹو،یوسف رضا گیلانی کے علاوہ اعلیٰ قیادت کی جرمنی میں میزبانی کا شرف حاصل رہا، آپ نے جنرل ضیاء الحق ڈکٹیٹر کے مظالم سے جرمنی کے شہر شہر جا کر مختلف اوقات پر کیمونٹی کو آگاہی دی۔ آپ ہر پاکستانی کے دکھ درد پر افسردہ ہوتے تھے اور اپنے ہم وطنوں کی ہر ممکن مدد بھی کرتے آپ کی اسی خوبی نے آپ کوکیمونٹی میں ہردلعزیز رکھا اور آج سب کی آنکھیں آپ کے لئے نم ہیں۔ پاکستان پیپلز پارٹی جرمنی میں بھی دیگر سیاسی پارٹیوں کی طرح قیادت کی دوڑ میں کچھ اختلافات مختلف وقتوں میں نظر آئے مگر سیّد ظفر عباس نے ہر دور میں پارٹی سے اپنی وفاداری کے پیشِ نظر سب جیالوں کو یکجا رکھنے کی کوشش رکھی یہی وجہ ہے کہ مختلف ادوار میں پاکستان پیپلز پارٹی جرمنی کی قیادت بدلتی رہی مگر سیّد ظفر عباس کو تمام جیالوں نے اپنے سر کا تاج بنا کر رکھا۔جرمنی میں پارٹی کے سینئر رہنما حمید اللہ زاہد،سجاد نقوی،سیّد وجیہ الحسن جعفری اور موجودہ صدر سیّد زاہد عباس آج سیّد ظفر عباس کے لئے گریہ کرتے ہوئے اُن کی پارٹی کے لئے خدمات کا اعتراف کر رہے ہیں،پاکستان پیپلز پارٹی کی اعلیٰ قیادت میں سے چیرمین بلاول بھٹو اور آصف ذرداری نے مرحوم کے انتقال پر نہایت دکھ کا اظہار کیا۔


سیّد ظفر عباس12۱ نومبر 1947کو اُس وقت کے ضلع جھنگ اورتحصیل چنیوٹ کے بھوانہ قصبہ میں پیدا ہوئے آپ وہاں سیّد ظفر عباس زیدی کے نام سے معروف تھے۔آپ کے والد سیّد علی حسن شاہ، آپ کا خاندان ”بریلی سادات“ کے نام سے مشہور ہے۔ آپ کے8بھائی3 بہنیں تھیں،آپ کی آخری بہن کے انتقال پر پاکستان گئے اور کرونا کی سبب پاکستان کا قیام طویل ہو گیا 12جون2020 پاکستان کے جرمنی واپس آئے،دوران پرواز آپ کی طبیعت بگڑ گئی فرینکفرٹ ایرپورٹ پر آپ کے دیرینہ دوست شاہد حسن نے انھیں فرینکفرٹ کے جڑواں شہر ”اوفن باخ“ کے ہسپتال پہنچا دیا،جہاں ڈاکٹروں نے”کرونا“ مرض تشخیص کی اور علاج شروع کیا،مگر آپ کی طبیعت دن بدن بگڑتی گئی،15دن کی علالت کے بعد2جولائی کو آپ اس دنیائے فانی سے کوچ کر گئے،اس طرح دیکھا جائے تو آپ پاکستان سے صرف 15 دن کے لئے جرمنی تشریف لائے مشہور کہاوت ہے کہ”مٹی اپنے محبوں کو کھینچی ہے“ کچھ ایسا ہی سیّد ظفر عباس کے ساتھ ہوا آپ اپنی خواہش کے مطابق اپنے تابوت سمیت 5جولائی قطر ایرویز کی پروازQR 8086سے واپس لاہور،پاکستان واپس چلے گئے،تاکہ اپنے وطن،اپنے قصبہ”بھوانہ“ کے آبائی قبرستان کی مٹی میں دفن ہونے کی سعادت نصیب ہو۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں