جرمن یونیورسٹیوں کا معیار دنیا کی بہترین یونیورسٹیوں میں ہوتا ہے: علی اکبر

جرمنی میں پاکستانی طلباء کی تعداد میں اضافہ باعث مسرت ہے: عظمت ذکریا

ڈارمسٹڈ یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی میں لگ بھگ ملکی غیر ملکی 46ہزار طالبعلم زیر تعلیم ہیں،ڈارمسٹد کے تینوں کیمپس میں نئے آنے والے 25 پاکستانی طلباء کو لگ بھگ 60سینئر طلباء نے خوش آمدید کہا اور ان کے اعزاز میں خوبصورت تقریب کا اہتمام کیا جس میں کونسلیٹ جنرل آف پاکستان شعیب منصور نے خصوصی شرکت کی، شرکاء میں ماسٹرز،بیچلرز اور PHD کے طلباء شامل تھے۔اس یونیورسٹی میں تقریبا 400 پاکستان سے آئے اعلیٰ تعلیم کے خواہشمند طالبعلم زیر تعلیم ہیں،جن میں ہر سال تعلیم مکمل کے کے کچھ چلے جاتے ہیں کچھ اچھی ملازمتوں پر فائز ہو کر جرمنی میں رہ جاتے ہیں۔

تقریب کو دلچسپ بنانے کے لئے طلباء نے مختلف گروپس کی شکل میں کھیل کئے،تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کونسلیٹ جنرل آف پاکستان شعیب منصور نے کہا کہ پاکستان سے آئے اعلیٰ تعلیم کے خواہاں طالبعلم ہمارے ملک کا مستقبل ہیں انکے لئے پاکستان کونسلیٹ کے دروازے ہر وقت کھلے ہیں،پاکستان سٹوڈنٹ آرگنائیزیشن کے صدر علی اکبر نے کہا جرمن یونیورسٹیوں کا معیار دنیا کی بہترین یونیورسٹیوں میں ہوتا ہے ان کا اور دوسرے طلباء کے جرمنی آنے کا مقصداعلیٰ تعلیم کا حصول اوروطن عزیز کی خدمت کرنا ہے،جرمن یونیورسٹیوں کا میعار تعلیم قابل رشک ہے،پی ایس اے کے جنرل سیکرٹری عظمت ذکریا نے پاکستان سے جرمنی آنے والے طلباء کی تعداد میں اضافے کو باعثِ مسرت قرار دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان سے دن بدن حصول تعلیم کے لئے آنے والوں کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے اور ہمارے پاکستانی طلباء نہائت محنت اور جانفشانی سے اپنی تعلیم مکمل کر رہے ہیں تقریب کے آخر میں PSA کے اراکین کی طرف سے پُرتکلف ڈنر کا اہتمام تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں