سیاسی جماعتوں کا الیکشن میں کالعدم شدت پسندوں سے مدد مانگنا شرمناک ہے

انہوں نے کہا کہ تمام پاکستانیوں کا اس بات پر اتفاق ہے کہ وطن عزیز میں امن قائم ہونا چاہئے جس کے لئے نیشنل ایکشن پلان بھی بنایا گیا جس کے تحت ملک بھر میں آپریشنز اور دہشتگروں کی مالی سیاسی مدد کرنے والوں کے خلاف کاروائی کرنے کا اعلان کیا گیا۔

سیاسی جماعتوں کا الیکشن میں کالعدم شدت پسندوں سے مدد مانگنا شرمناک ہے ،اصولوں اور نظریات کی بات کرنے والے چند ووٹوں کی خاطر پاکستان دشمن عناصر سے گٹھ جوڑ کر رہے ہیں ،سندھ غربت اور تباہی کا نمونہ بن چکا ہے اورسندھ کے مطلق العنان حکمران جماعت ہر طرف سب اچھا کی راگ آلاپتی نہیں تھکتی، تھر کے بھوک او پیاس سے بلکتے بچے آج بھی بنیادی انسانی حقوق سے محروم ہیں، ان خیالات کا اظہار مجلس وحدت مسلمین کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے مٹیاری این اے 223میں عظیم الشان انتخابی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ تمام پاکستانیوں کا اس بات پر اتفاق ہے کہ وطن عزیز میں امن قائم ہونا چاہئے جس کے لئے نیشنل ایکشن پلان بھی بنایا گیا جس کے تحت ملک بھر میں آپریشنز اور دہشتگروں کی مالی سیاسی مدد کرنے والوں کے خلاف کاروائی کرنے کا اعلان کیا گیا ،مگر ہمارے ناعاقبت اندیش حکمرانوں کے مصلحت پسندانہ پالیسوں کے سبب نیشنل ایکشن پلان ایک خواب بن کر رہ گیا،ہم شروع دن سے کہتے رہے کہ نیشنل ایکشن پلان کی سمت موڑدی گئی ہے نہایت سستی سے کام کیا جارہا ہے،او راب اسی پلان کے تحت پابندی کی شکارکالعدم شدت پسندوں کو نا صرف الیکشن میں اتارا گیا بلکہ خود کو لبرل سیاسی جماعتیں کہنے والے ان سے چند ووٹو ں کی خاطر گٹھ جوڑ میں مصروف ہیں ، اس عمل کا خمیازہ ان جماعتوں کو آئندہ ضرور بھگتنا پڑے گا ۔،الیکشن سے قبل کالعدم دہشتگردوں کے نام شیڈول فور سے نکالنے والوں نے اسی ہزار شہدائے پاکستان کے ساتھ غداری کی ہے ، وطن عزیز میں قیام امن کے لئے ہر ممکن کوشش جاری رکھیں گئے ،ہم پاکستان کو تکفیریت کے ناسور سے پاک کرنے کی جدوجہد جاری رکھے ہوئے ہیں ۔
علامہ ناصر عباس جعفری نے کہا ہے کہ سندھ میں غربت اور افلاس نے ڈیرے ڈال رکھے ہیں تعلیمی نظام برباد ہو چکا ہے ،انفرسٹرکچر تباہ ہو چکاہے ،اور یہاں کے ماضی کے حکمران جماعت ہر طر ف سب اچھا کی رٹ لگا رہی ہے،لاڑکانہ ان کا گڑھ ہے ،اور پسماندگی اور تباہ حالی میں صوبے کے تمام اضلاع میں سرفہرست ہے ،اپنی الیکشن کمپین پر اربوں روپے خرچ کرنے والی جماعت کے پاس سندہ کے باسیوں کو دینے کے لئے سوائے نعروں کے کچھ بھی نہیں ہے ،یہ خود بھی دہشتگردی کا شکار رہے ہیں مگر ان کے امیدوران کئی حلقوں میں کالعدم جماعتوں کے ساتھ گٹھ جوڑ کئے ہوئے ہیں ،مٹیاری کی عوام نے ضمنی الیکشن میں مجلس وحدت مسلمین کے نامزد امیدوار کے حق میں اپنے ووٹوں سے ایک مضبوط آواز بلند کی ،اور وڈیرہ شاہی سے بے زاری کا اظہار کیا تھا ،ایک مرتبہ پھر سے سندھ کے بیٹوں کو موقع ملا ہے کہ وہ اپنے ووٹ کی طاقت سے مظلومین کے حق میں سندھ کی وڈیرہ شاہی اور مورثی سیاست سے چھٹکارہ حاصل کرنے کے لئے کردار ادا کرکریں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں